130- Inferno by Dan Brown

Inferno by Dan Brown

inferno-dan-brownمصنف:ڈین براؤن

صنف: ناول، انگریزی ادب

صفحات: 461

سن اشاعت: 2013

ISBN: 978-1-845-95067-5

کسی بھی مصنف کی کامیابی کی نشانی یہ ہے کہ اس کی ایک کتاب پڑھنے کے بعد قاری اس کی لکھی دیگر کتب پڑھنے کی خواہش محسوس کرے۔ ایسا ہی ڈین براؤن کے ساتھ بھی ہے۔ ان کا تحریر کردہ ایک ناول پڑھنے کے بعد ان کی دوسری کتابوں کے مطالعے کی تحریک پیدا ہوتی ہے۔ کتابستان میں گاہے بہ گاہے ان کے کام کو پیش کیا جاتا رہا ہے۔ ان کی ابتدائی کتب گرچہ بہت متاثر کن نہیں رہی ہیں لیکن وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ براؤن کے لکھنے کے انداز میں بتدریج بہتری آئی ہے۔ ان کے سسپنس پیش کرنے کا طریقہ بہتر ہوا ہے۔ اینجلز اینڈ ڈیمنز، گرچہ موضوع کے اعتبار سے اک عمدہ اور منفرد ناول تھا، تاہم اس کے مطالعے کے کافی عرصے بعد تک بھی مصنف کی کوئی کتاب زیرِ مطالعہ نہ آ سکی، گرچہ نئے ناول منظر عام پہ آ چکے تھے۔ تاہم “دی لاسٹ سمبل” کا مطالعہ کرتے ہوئے احساس ہوا کہ اس ناول کو مکمل کئے بغیر ہاتھ سے رکھا نہیں جا سکتا۔ اس ناول کے اختتام پہ براؤن کے تازہ ترین ناول کی تلاش شروع ہوئی اور ہاتھ میں انفرنو آ گیا، جو ہمارا آج کا موضوع ہے اور آج کل دی ڈاونشی کوڈ ہمارے زیر مطالعہ ہے۔ امید ہے جلد ہی اس پہ لکھا گیا مضمون  کتابستان کا حصہ بنے گا۔ عمیرا احمد بابا یحییٰ خان کے بعد ڈین براؤن بھی ہماری اس فہرست میں شامل ہو گئے ہیں جن مصنفین کی آنے والی کتب کا ہم بےچینی سے انتظار کرتے ہیں۔ Continue reading 130- Inferno by Dan Brown

Advertisements

122-انسانی قیامت از علیم الحق حقی

انسانی قیامت از علیم الحق حقی

insani-qayamat_Aleem-ul-Haq_Haqqiمصنف: علیم الحق حقی

صنف: ناول، پاکستانی ادب

صفحات: 188

ناشر: علی میاں پبلی کیشنز، لاہور

سن اشاعت: 1998

پاکستان میں پاپولر فکشن لکھنے والے مصنفین میں غیر ملکی ناولوں کے تراجم کرنے کا رجحان کافی رہا ہے۔ عموماً یہ ترجمے لفظی یا بامحاورہ نہیں ہوتے بلکہ مصنفین کہانی کی فضا اور کرداروں کو مقامی یعنی پاکستانی ماحول کے مطابق ڈھال کے پیش کرتے ہیں تاہم کہانی کا اصلی متن وہی رہتا ہے۔ یہاں تک بات ٹھیک رہتی ہے لیکن ہمارے زیادہ تر مصنفین ان ناولوں کو اپنے ناموں سے پیش کرتے ہیں۔ ان ناولوں کو کہاں سے اخذ کیا گیا، ان کی انسپیریشن کس ناول سے لی گئی، اس بارے میں مصنف خاموش رہتے ہیں۔ ایسے ناول عوام میں انہی مصنفین (مترجمین) کے ناموں سے مشہور ہو جاتے ہیں اور ان کے اصل مصنف اور اصلی کتاب کا نام کم ہی سامنے آ پاتا ہے۔ ہمارے نزدیک یہ فعل مناسب نہیں، اس ضمن میں جتنی غلطی مصنف کی ہے اتنی ہی ناشر کی بھی ہے۔ ایک ناشر کو چاہئے کہ وہ مترجم کو اس بات کی تحریک دے کہ وہ ناول کے اصل مصنف کا بھی ذکر کرے اور اس ناول کا بھی ذکر کرے جس سے کہانی اٹھائی گئی ہے۔ کتابستان میں ہماری کوشش رہتی ہے کہ ہم تراجم کے ساتھ اصل ناول اور مصنف کا حوالہ بھی دیں تاکہ حقائق درست رہیں، تاہم چند موقعے ایسے بھی رہے ہیں جب ہم اپنی کم علمی کے باعث اصل کتاب نہیں ڈھونڈ سکے۔ حقی صاحب کا موجودہ ناول بھی ایک ایسا ہی ناول ہے جس کے اصل مصنف کا انہوں نے ذکر نہیں کیا۔ تاہم اپنے قارئین کے لئے ہم یہ بتاتے چلیں کہ یہ امریکی مصنف گورے وڈال کے ناول “کالکی” سے ماخوذ ہے۔ انسانی قیامت، علیم الحق حقی صاحب کی تصنیف ہے۔ حقی صاحب کی تصنیفات پہ پہلے بھی بات ہو چکی ہے۔ اس ناول کی بنیاد ہندو مذہب کے ایک عقیدے کے گرد گھومتی ہے جس کے مطابق دنیا کے اختتام پہ سفید گھوڑے پہ کالکی اوتار کی آمد ہوگی جو بھگوان وشنو کا آخری اوتار ہوگا۔ اس اوتار کی آمد کے بعد دنیا کا خاتمہ ہو جائے گا۔

موجودہ ناول انسانی قیامت، کالکی اوتار ہونے کے دعوے دار ایک شخص کی کہانی ہے جو ایک امریکی پائلٹ خاتون تھیوڈور اوٹنگز کی زبانی پیش کی گئی ہے۔ تھیوڈور اوٹنگز کو ایک ایسے شخص کے انٹرویو کی ذمہ داری دی جاتی ہے جس نے کالکی ہونے کا دعویٰ کیا تھا۔ کالکی ہندوستان میں ایک آشرم چلا رہا تھا۔ اس کے چیلے مختلف لوگوں میں کنول کے پھول تقسیم کیا کرتے تھے اور وہ کسی سے کسی قسم کی مالی امداد نہیں لیا کرتے تھے اسی وجہ سے کالکی کئی لوگوں کی نظروں میں آ رہا تھا، لوگوں کا خیال تھا کہ اس کی مالی امداد منشیات سے وابستہ گروہ کر رہے ہیں۔ کچھ لوگ کالکی کے بارے میں مشکوک تھے اور ان کا خیال تھا کہ “کوئی طاقت مغربی دنیا کو سرنگوں کرنا چاہتی ہے۔ اس کی سب سے سادہ اور آسان ترکیب یہ ہے کہ مغرب کی نئی نسل کو نشے کی لت ڈال دی جائے۔ انہیں ایک ایسے مذہب سے روشناس کرایا جائے جو یہ بتائے کہ دنیا کا خاتمہ قریب ہے۔ ایسے مایوس اور نشے کے عادی لوگ لڑ سکتے ہیں کبھی، وہ تو جنگ شروع ہونے سے پہلے ہی ہار جائیں گے۔” Continue reading 122-انسانی قیامت از علیم الحق حقی

111- Humiliated and insulted by Fyodor Dostoyevsky

Humiliated and insulted by Fyodor Dostoyevsky

ذلتوں کے مارے لوگ از فیودور دوستو فیسکی

The insulted and injuredمصنف: فیودور دوستو فیسکی

ترجمہ: ذلتوں کے مارے لوگ

مترجم: ض ۔ انصاری

صنف: ناول، روسی ادب

زبان: روسی

روسی ادب دنیا کے بہترین ادب میں شمار ہوتا ہے۔ روس نے دنیا کو بڑے ادیب دیئے ہیں جن میں لیو ٹالسٹائی، الیگزینڈر پشکن، فیودور دوستوفیسکی وغیرہ جیسے بڑے نام شامل ہیں۔ نثر ہو یا نظم، دونوں میدانوں میں ہی روسی ادباء اور شعراء نے کمالات دکھائے ہیں۔ کتابستان میں مشہور روسی مصنف لیوٹالسٹائی کےکچھ کام کو پیش کیا جا چکا ہے ۔آج ایک اور عظیم مصنف کے تعارف کا ہم اعزاز حاصل کر رہے ہیں جن کا نام ہے ’فیودور دستوفیسکی‘ ۔ دستو فیسکی کا زمانہ ۱۸۲۱ سے ۱۸۸۱ کا ہے۔ آپ ایک مشہور ناول نگار، فلسفی، جرنلسٹ اور مضمون نگار تھے۔ دتسو فیسکی نے انسانوں کی نفسیات کو روسی لوگوں کی حالت زار کے حوالے سے پیش کیا ہے۔ دستو فیسکی کے بارے میں مزید جاننے کے لئے یہاں جائیں۔ Continue reading 111- Humiliated and insulted by Fyodor Dostoyevsky

100- سرخ فیتہ از قدرت اللہ شہاب

سرخ فیتہ از قدرت اللہ شہاب

Surkh Feetaمصنف: قدرت اللہ شہاب

صنف: افسانے، اردو ادب، پاکستانی ادب

صفحات: 239

کتابستان آج اپنے بلاگ پہ 100 ویں کتاب کا تعارف و تبصرہ پیش کرنے جا رہا ہے۔ یہ کتابستان کے سفر میں ایک سنگ میل ہے۔ اس سفر کے دوران ہماری کوشش رہی ہے کہ مختلف النوع کتب کے بارے میں بات کی جائے جو مذہب سے لے کے فکشن، بین الاقوامی ادب اور سائنس و ٹیکنالوجی کے میدانوں کی کتب کا جائزہ پیش کیا گیا ہے۔ آج کے اس موقع پہ ہم آپ کے لئے ایک خاص کتاب پیش کر رہے ہیں جس کا عنوان ہے سرخ فیتہ اور یہ قدرت اللہ شہاب صاحب کی لکھی ہوئی ہے۔ Continue reading 100- سرخ فیتہ از قدرت اللہ شہاب

099-لگن از بشریٰ رحمٰن

لگن از بشریٰ رحمٰن

Lagan- Bushra Rehmanمصنفہ: بشریٰ رحمان

صفحات: 546

قیمت: 550 روپے

صنف: ناول؛ پاکستانی ادب

ناشر: خزینہء علم و ادب، لاہور

بشریٰ رحمٰن صاحبہ کے بارے میں پہلے بھی بات ہو چکی ہے۔ آپ ایک جانی مانی مصنفہ ہیں جن کے قلم سے کئی مشہور ناول اور افسانے نکل چکے ہیں۔ کتابستان میں آج جس کتاب کے بارے میں ہم بات کر رہے ہیں وہ آپ کا لکھا ہوا ایک مشہور ناول ہے جس کا عنوان ہے “لگن”۔ یہ وہی ناول ہے جس پہ پاکستان ٹیلی ویژن کے گولڈن زمانے میں ڈرامہ بنایا جا چکا ہے۔ اس دور میں اس ڈرامے نے مقبولیت کے نئے ریکارڈ قائم کئے تھے جس میں ناول کی کہانی کا بڑا ہاتھ تھا۔ Continue reading 099-لگن از بشریٰ رحمٰن

087- میرے چارہ گر از رخسانہ نگار عدن

میرے چارہ گر از رخسانہ نگار عدن

Mere Chara Gar by Rukhsana Nigar Adnanمصنفہ: رخسانہ نگار عدن

صنف: ناولٹ، اردو ادب

رخسانہ نگار صاحبہ، خواتین کے لئے شائع ہونے والے پرچوں کی باقاعدہ لکھاری ہیں۔ آپ کے قلم سے کئی ناول، ناولٹ نکل چکے ہیں۔ کتابستان کے گزشتہ صفحات میں آپ کے لکھے ہوئے ایک ناول کا تذکرہ ہو چکا ہے۔ آج کا موضوع آپ کا لکھا ہوا ایک ناولٹ ہے جو ماہنامہ شعاع ڈائجسٹ میں قسط وار شائع ہوتا رہا ہے۔ Continue reading 087- میرے چارہ گر از رخسانہ نگار عدن

079- April lady by Georgette Heyer

April lady by Georgette Heyer

April ladyمصنفہ: جیورجٹ ہیئر

صنف: ناول، انگریزی ادب

سن اشاعت: 1957

جیورجٹ ہیئر، ایک مشہور برطانوی انگریز ادیبہ تھیں جن کی وجہ شہرت رومانوی کہانیاں ہیں۔ آپ کا انتقال 1974 میں ہوا۔ آپ کئی مشہور ناولوں کی مصنفہ ہیں۔ کتابستان میں آج پہلی بار آپ کے ناول پہ بات ہونے جا رہی ہے۔ ہمیں امید ہے کہ مستقبل میں مزید ناول بھی کتابستان کا حصہ بنیں گے۔

“اپریل لیڈی” ایک رومانوی داستان ہے جس میں 1813 کا زمانہ دکھایا گیا ہے۔ یہ ہیلن کارڈروس کی کہانی ہے جو ایک امیر آدمی “ارل آف کارڈروس” کی بیوی ہے۔ ہیلن بذات خود بھی ایک امیر گھرانے سے تعلق رکھتی تھی لیکن بدقسمتی سے اس کے والد اور بھائی اپنے خاندانی وقار کو برقرار نہیں رکھ سکے اور بدحالی کا شکار ہو گئے۔ Continue reading 079- April lady by Georgette Heyer

071- لاحاصل از عمیرا احمد

لاحاصل از عمیرا احمد

La hasil by Umera Ahmedمصنفہ:عمیرا احمد

صفحات: 275

کتابستان میں عمیرا احمد وہ مصنفہ ہیں جن کی کتب پہ سب سے زیادہ بات ہوئی ہے۔ آج پھر سے ہمارا موضوع ان کی لکھی ہوئی کتاب ہے۔ ایسا یقیناً ان کے کام کی اہمیت کی وجہ سے ہے۔ ان کے ناولوں نے جس طرح سے قارئین کے دلوں اور ذہنوں میں اپنی جگہ بنائی ہے وہ کم ہی دیکھنے میں آتی ہے۔ آپ کی تحریریں دیر پا اثرات چھوڑ جاتی ہیں اور مدتوں قارئین کے ذہن میں محفوظ رہتی ہیں۔ آپ کی تحاریر گرچہ عمومی ہیں لیکن ان کے کردار بہت خاص ہیں۔ آپ کے زیادہ تر کردار مشہور ہوئے ہیں جیسے سالار، امامہ، عکس، در شہوار وغیرہ۔ لاحاصل کی مرکزی کردار بھی ایک خاص خاتون ہیں جن کا نام ہے خدیجہ نور۔ Continue reading 071- لاحاصل از عمیرا احمد

069- بہشت از بشریٰ رحمٰن

بہشت از بشریٰ رحمٰن

Bahishtمصنفہ: بشریٰ رحمٰن

صفحات: 186

سن اشاعت: 2002

ناشر: خزینہ علم و ادب، لاہور

بشریٰ رحمٰن صاحبہ کا نام کسی تعارف کا محتاج نہیں۔ آپ ایک مشہور مصنفہ اور سیاستدان ہیں۔ کتابستان میں گفتگو آپ کے علمی کام تک ہی محدود رہے گی۔ آپ کے قلم سے کئی ناول، ناولٹ اور افسانے نکل چکے ہیں جنہوں نے بہت مقبولیت حاصل کی۔ ان میں پارسا، پیاسی، خوبصوورت، لازوال وغیرہ شامل ہیں۔ بشریٰ رحمٰن صاحبہ کا موضوع عورت ہے۔ آپ کی تحریروں میں عورتوں کی زندگی کے بارے میں بھرپور روشنی پڑتی ہے۔

آج جس کتاب پہ بات ہو رہی ہے اس کا عنوان ہے بہشت۔ یہ ناولٹوں کا مجموعہ ہے۔ اس میں کل پانچ ناولٹ شامل ہیں جن کے عنوانات ہیں: بہشت، بیگم صاحبہ، ممتا، امڑی اور بددعا۔ Continue reading 069- بہشت از بشریٰ رحمٰن

068- دجال از علیم الحق حقی

دجال از علیم الحق حقی

dajjal-titleمصنف: علیم الحق حقی

دجال کے تصور کے بارے میں ہم پہلے بھی کچھ کتب میں ذکر کر چکے ہیں۔ یہ ایک ایسا فتنہ ہے جس کا ذکر تمام الہامی مذاہب میں پایا جاتا ہے۔ ہمارے آخری پیغمبر الزماں نے ایسی کئی احادیث بیان کی ہیں جن میں مستقبل میں سامنے آنے والے فتنہ دجال سے خبردار کیا گیا ہے۔ عیسائی مذہب میں بھی یہ تصور موجود ہے۔ علیم الحق حقی صاحب کے پیش کردہ ناول کا موضوع یہی فتنہ ہے تاہم ناول کی بنیاد عیسائی عقیدے کے تصور پہ رکھی گئی ہے۔ ناول کا مرکزی خیال ایک انگریزی ناول اومین (Omen) سے لیا گیا ہے۔ تاہم حقی صاحب کا یہ ناول انگریزی کے دو ناولوں کی کہانیوں کو آپس میں مکس کرکے پیش کرتا ہے۔ ایک کا ذکر ہم کر چکے ہیں اور دوسرا سڈنی شیلڈن کا ناول Are You Afraid of the Dark? ہے۔

ناول کے مطابق عیسائیت میں تصور ہے کہ دنیا کے اختتام سے پہلے شیطان اپنی اولاد دنیا میں بھیجے گا۔ یہ اولاد ایک جانور کے جسم سے پیدا ہوگی اور دنیا میں فتنہ و فساد پیداکرے گی۔ شیطان کا مقابلہ کرنے کے لئے حضرت عیسیٰ علیہ السلام دنیا میں تشریف لائیں گے اور دنیا میں امن و امان قائم ہوگا۔ ناول کا آغاز اسی تصور سے ہوا ہے جہاں ایک مادہ گیدڑ کے ہاں شیطانی بچے کی پیدائش ہوتی ہے۔ اس بچے کو شیطانی چیلے ایک ایسے جوڑے کے بچے سے تبدیل کر دیتے ہیں جن کے ہاں بھی عین اسی وقت اولاد پیدا ہوئی تھی Continue reading 068- دجال از علیم الحق حقی

067-The legend of sleepy hollow by Washington Irving

The legend of sleepy hollow by Washington Irving

sleepy hollowمصنف: واشنگٹن ارونگ

زبان: انگریزی

سن اشاعت: 1820

نام ترجمہ: سر کٹا گھڑ سوار

مترجم: ریاض احمد

ناشر: فیروز سنز پبلی کیشنز

واشنگٹن ارونگ، انیسویں صدی کے ایک امریکی مصنف تھے۔ آپ نے زیادہ شہرت اپنی مختصر کہانیوں سے حاصل کی۔ آپ کے کام کو اس وقت کے یورپ میں بھی پسند کیا گیا۔ یعنی آپ کی شہرت بین الاقوامی نوعیت کی تھی۔ کتابستان میں آج آپ کی مختصر کہانیوں کے ایک مجموعے کو موضوع بنایا گیا ہے۔ یہ مجموعہ بھی کافی پرانا ہے۔ یہ ترجمہ 1975 میں ریاض احمد صاحب نے کیا اور فیروز سنز پبلی کیشنز والوں نے شائع کیا۔ انیسویں صدی میں جب یہ کہانیاں شائع ہوئی ہوں گی تو یقیناً بڑوں نے انہیں شوق سے پڑھا ہوگا، لیکن اب انہیں پڑھتے ہوئے بچوں کی کہانیوں جیسا احساس ہوتا ہے۔ ایسا اس لئے ہے کہ وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ انسانی معلومات اور علم میں اضافہ ہوتا چلا آیا ہے۔ ہر دور کے بچے پچھلے دور کے بچوں سے تیز اور سمجھدار ہوتے جا رہے ہیں۔ اور یہی وجہ ہے کہ اب ہم ان کہانیوں کو بچوں کی کہانیاں قرار دے رہے ہیں۔ Continue reading 067-The legend of sleepy hollow by Washington Irving

065- شہرِ محبت از نگہت سیما

شہرِ محبت از نگہت سیما

Shaher-e-Muhabbatمصنفہ: نگہت سیما

صفحات: 152

قیمت: 250 روپے

سن اشاعت: 2009

ناشر: المجاھد پبلشرز، گجرانوالہ

نگہت سیما صاحبہ کا نام خواتین کے لئے شائع ہونے والے پرچے پڑھنے والے قارئین کے لئے قطعی نیا نہیں۔ آپ باقاعدگی سے لکھنے والی مصنفات میں شامل ہیں۔ کئی ناول، ناولٹ اور افسانے آپ کے قلم سے نکل چکے ہیں۔ آپ کی تصنیفات میں سے کچھ عنوان یہ ہیں: ماہِ تمام، پل صراط، انٹلیلکچوئل، خواب رنگ اور راستے وغیرہ۔

شہرِ محبت ایک ناولٹ ہے۔ اس کتاب کا انتساب مصنفہ نے ان محبتوں کے نام کیا ہے جو ناپید ہو چکی ہیں۔ یہ سمیعہ کی کہانی ہے جو دو بہن بھائیوں سمیت اپنے والدین کے ساتھ رہتی تھی۔ سمیعہ اپنی اصلیت سے بےخبر تھی۔ اسے ایسا محسوس ہوتا تھا کہ اس کی والدہ کا رویہ اس کے دونوں بہن بھائیوں کے ساتھ اس کی نسبت سے اچھا ہے۔ Continue reading 065- شہرِ محبت از نگہت سیما

064- مصحف از نمرا احمد

مصحف از نمرا احمد

Mushuf-by-Nimra-Ahmedمصنفہ: نمرہ احمد

ناشر: خواتین ڈائجسٹ

نمرہ احمد، نسبتاً نئی اور کم عمر لکھاری ہیں۔ اس کے باوجود آپ کی تحریروں نے بہت پسندیدگی حاصل کی ہے۔ آپ کی تحاریر مختلف ڈائجسٹس میں باقاعدگی سے چھپ رہی ہیں۔ آپ کے قلم سے ناول، ناولٹ اور کئی افسانے نکل چکے ہیں۔ کئی قارئین آپ کے لکھے ہوئے کو عمیرا احمد کے لکھے جیسا قرار دیتے ہیں۔ ایسا شاید موضوعات کے چناؤ کی وجہ سے ہے۔ نمرا احمد کے موضوعات میں مذہب بھی ایک موضوع ہے۔ آج کا زیر گفتگو ناول “مصحف” کا موضوع بھی مذہب سے متاثرہ ہے۔ اس کے علاوہ جنت کے پتے بھی ایک ایسا ہی ناول ہے۔ نمرا احمد کے لکھے ہوئے دیگر ناولوں میں قراقرم کا تاج محل، بیلی راجپوتاں کی ملکہ، سانس ساکن تھی وغیرہ شامل ہیں۔

“مصحف” کا لفظ صحیفے سے لیا گیا ہے یعنی وہ الہامی کتاب جو اللہ تعالیٰ نے اپنے رسول پہ نازل کی۔ ناول میں مصحف کا لفظ قرآن پاک کے لئے استعمال کیا گیا ہے اور ناول کا مرکزی خیال یہی کتاب ہے۔ ڈائجسٹ میں شائع ہونے کی وجہ سے اس کہانی میں بھی وہ تمام لوازمات شامل ہیں جو ڈائجسٹی کہانیوں کا خاصہ ہیں۔ کہانی کا مرکزی کردار ایک لڑکی، محمل ابراہیم، ہے جس کے والدین کا انتقال ہو چکا ہے۔ Continue reading 064- مصحف از نمرا احمد

063- پہلی محبت کے آنسو از اے حمید

پہلی محبت کے آنسو از اے حمید

Pehli Muhabbat K Aansooمصنف: اے حمید

صفحات: 662

پہلی محبت کے آنسو اے حمید صاحب کی تصنیف ہے۔ اے حمید صاحب کا نام پاپولر فکشن پڑھنے والوں کے لئے نیا اور اجنبی نہیں۔ آپ بچوں کے بھی جانے مانے ہوئے ادیب ہیں۔ “پہلی محبت کے آنسو” ایک طویل ناول ہے جو ایک اردو پرچے میں قسط وار شائع ہوتا رہا ہے اور کتابی شکل میں بھی دستیاب ہے۔

کتاب ہاتھ میں لینے سے پہلے قاری کو اندازہ ہونا چاہئے کہ یہ ناول پاپولر فکشن کی کیٹیگری سے تعلق رکھتا ہے اور وقت گزاری کے طور پہ پڑھا جا سکتا ہے۔ ناول میں کئی غیر فطری کردار موجود ہیں اس لئے اس ناول میں حقیقت ڈھونڈنے کی بجائے اس کو فکشن کے تناظر میں پڑھنا مناسب رہے گا۔ “پہلی محبت کے آنسو” بنیادی طور پہ ایک رومانوی داستان ہے جس میں کئی موڑ ہیں۔ Continue reading 063- پہلی محبت کے آنسو از اے حمید

061- دل من مسافر من از عنیزہ سید

دل من مسافر من از عنیزہ سید

sshot-622مصنفہ: عنیزہ سید
صفحات: 640

عنیزہ سید صاحبہ کی ایک تخلیق کا ہم پہلے بھی تعارف پیش کر چکے ہیں۔ آج بات ہونے والی ہے آپ کے ایک اور ناول کے بارے میں، جس کا عنوان ہے “دل من مسافر من”۔ ناول کا عنوان فیض احمد فیض کی مشہور نظم سے لیا گیا ہے۔ ذیل میں قارئین کی دل چسپی کے لئے پیش کی جا رہی ہے۔

دلِ‌ من مسافرِ من
ہوا پھر سے حکم صادر
دیں گلی گلی صدائیں
کریں رخ نگر نگر کا
کہ سراغ کوئی پائیں
کسی یار نامہ بر کا
ہر اک اجنبی سے پوچھیں
جو پتا تھا اپنے گھر کا
سر کوئے ناشنایاں
ہمیں دن سے رات کرنا
کبھی اِس سے بات کرنا
کبھی اُس سے بات کرنا
تمہیں کیا کہوں کہ کیا ہے
شبِ غم بری بلا ہے
ہمیں یہ بھی تھا غنیمت
جو کوئی شمار ہوتا
ہمیں کیا برا تھا مرنا
اگر ایک بار ہوتا !!!

ناول کے اتنے خوبصورت عنوان کے بعد اس سے وابستہ توقعات بڑھ جاتی ہیں۔ Continue reading 061- دل من مسافر من از عنیزہ سید

058- دربارِ دل از عمیرا احمد

دربارِ دل از عمیرا احمد

مصنفہ: عمیرا احمد
صفحات: 200
قیمت: 200 روپے
سن اشاعت: ء 2005
ناشر: علم و عرفان پبلشرز

موجودہ دور کے ناول نگاروں میں عمیرا احمد کا نام سرفہرست ہے۔ کتابستان میں ان کی کئی کتابوں پہ بات ہو چکی ہے۔ ان کی کتب عمومی پسندیدگی کی سند پاتی ہیں۔ پاکستان میں یہ درجہ کم ہی مصنفین کو حاصل ہو سکا ہے کہ لوگ کسی مصنف کی کتاب کا شائع ہونے سے پہلے ہی منتظر ہوں۔ عمیرا احمد نے اپنے منفرد موضوعات اور مذہب کے امتزاج سے کہانیوں کے ایسے رخ پیش کئے ہیں جنہوں نے پڑھنے والوں سے خوب داد سمیٹی ہے۔ آج جس ناول پہ بات ہو رہی ہے وہ بھی ایک ایسے موضوع پہ لکھا گیا ہے کہ پڑھنے والے کو مکمل اپنی گرفت میں لے لیتا ہے۔

دربار دل کا موضوع انسان کی اللہ سے مانگی ہوئی دعا ہے۔ اس ناول کی بنیاد سورۃ بنی اسرائیل کی اس آیت پہ رکھی گئی ہے جس کا مفہوم ہے کہ انسان اپنے لئے شر کو ایسے مانگتا ہے کہ جیسے بھلائی ہو اور بےشک انسان بڑا جلد باز ہے۔ Continue reading 058- دربارِ دل از عمیرا احمد

056- Memories of Midnight by Sidney Sheldon میموریز آف مڈنائٹ از سڈنی شیلڈن

Memories of Midnight by Sidney Sheldon

میموریز آف مڈنائٹ  از سڈنی شیلڈن

مصنف: سڈنی شیلڈن
صفحات: 404
زبان: انگریزی
سن اشاعت: 1990

مشہور امریکی مصنف سڈنی شیلڈن کے کچھ ناولوں سے ہم آپ کو پہلے ہی متعارف کروا چکے ہیں اور امید کرتے ہیں کہ وہ آپ کے مطالعے سے بھی ضرور گزرے ہوں گے۔ آج جس کتاب کے بارے میں یہاں گفتگو ہونے والی ہے اس کا عنوان ہے Memories of midnight یعنی آدھی رات کی یادیں۔ یہ ناول، سڈنی شیلڈن کے ناول The Other Side of Midnight کا دوسرا حصہ ہے۔ ناول کا آغاز وہاں سے ہوتا ہے جہاں The Other Side of Midnight کا اختتام ہوتا ہے۔ Continue reading 056- Memories of Midnight by Sidney Sheldon میموریز آف مڈنائٹ از سڈنی شیلڈن

055- محبتوں کے آسیب (Of love and other demons) از گیبریل گارشیا مارکیز (Gabriel Garcia Marcques)

Of love and other demons by Gabriel Garcia Marcques

محبتوں کے آسیب از گیبریل گارشیا مارکیز

نام کتاب: Of love and other demons
ترجمہ: محبتوں کے آسیب
مترجم: ضیاء الحق
صفحات: 160
قیمت: 200 روپے
سن اشاعت: 2012
ناشر: فکشن ہاؤس لاہور

گیبریل گارشیا مارکیز کا نام عالمی ادب سے دلچسپی رکھنے والوں کے لئے نیا ہرگز نہیں۔ آپ کولمبیا سے تعلق رکھنے والے مصنف ہیں جنہیں اپنی تحاریر کی بنا پہ ادب کا نوبل انعام بھی مل چکا ہے۔ آپ کے قلم سے کئی ناول اور مختصر کہانیاں نکل چکی ہیں جنہوں نے بے انتہا شہرت پائی۔ ان کتابوں میں One Hundred Years of Solitude، No One Writes to the Colonel، اور Love in the Time of Cholera وغیرہ شامل ہیں۔ آنے والے دنوں میں ان شاء اللہ یہ کتب بھی کتابستان کا موضوع بنیں گی۔

کتابستان کا آج کا موضوع گیبریل کے قلم سے نکلی ہوئی ایک مختصر کہانی ہے جس کا عنوان ہے Of love and other demons۔ اس کہانی کا اردو میں ترجمہ ضیاء الحق صاحب نے “محبتوں کے آسیب” کے عنوان کے تحت کیا ہے۔ یہ ایک بارہ سالہ لڑکی سائیوا ماریہ کی زندگی کی کہانی ہے جو اس وقت شروع ہوتی ہے جب ایک آوارہ اور پاگل کتا اس لڑکی کو کاٹ جاتا ہے۔ Continue reading 055- محبتوں کے آسیب (Of love and other demons) از گیبریل گارشیا مارکیز (Gabriel Garcia Marcques)

054- دل، دیا، دہلیز از رفعت سراج

دل، دیا، دہلیز از رفعت سراج

مصنفہ: رفعت سراج
صفحات: 1106

کتابستان پہ رفعت سراج صاحبہ کی یہ پہلی کتاب ہے جس پہ بات ہونے جا رہی ہے تاہم رفعت سراج کسی بھی طرح قارئین کے لئے نیا نام نہیں ہے۔ آپ خواتین ڈائجسٹوں کی باقاعدہ لکھاری ہیں اور کئی ناول آپ کے قلم سے نکل چکے ہیں جن میں سے کئی ایک نے بہت مقبولیت بھی حاصل کی ہے۔ آپ کے دیگر ناولوں میں دلِ آباد، شہر یاراں، امانت وغیرہ شامل ہیں۔

دل دیا دہلیز ایک ہزار سے زیادہ صفحات پہ محیط ایک ضخیم ناول ہے۔ اس بات سے قاری  اندازہ کر سکتا ہے کہ وہ ایک انتہائی تفصیلی انداز میں لکھا ہوا ناول پڑھنے جا رہا ہے۔ یہی اس ناول کی اچھی بات ہے کہ اس میں مصنفہ نے ہر کردار کا پس منظر اور اس کی کہانی کو تفصیلی واضح کیا ہے جس کی وجہ ناول میں اس کی سوچ اور نفسیات کو سمجھنے میں مدد ملتی ہے جو ایک طرف تو ناول کی خوبصورتی میں اضافہ کرتے ہیں وہیں کرداروں کی ضرورت کو بھی واضح کرتے ہیں۔ بہت سارے ناولوں میں ناول نگار صرف مرکزی کرداروں کی کہانی پیش کرتے ہیں اور دیگر کرداروں پہ توجہ نہیں دیتے جس کی وجہ سے وہ بھرتی کے معلوم ہونے لگتے ہیں، تاہم دل دیا دہلیز میں ایسا نہیں ہے۔ مصنفہ نے ہر کردار کو توجہ اور وقت دیا ہے اور اس سے بھر پور انصاف کیا ہے۔ Continue reading 054- دل، دیا، دہلیز از رفعت سراج

053- ڈیسیپشن پوائنٹ (Deception point) از ڈین براؤن (Dan Brown)

ڈیسیپشن پوائنٹ (Deception point) از ڈین براؤن (Dan Brown)

مصنف: ڈین براؤن
زبان: انگریزی
سن اشاعت: 2001

ڈین براؤن ایک معروف امریکی مصنف ہیں۔ جو اپنے تھرلر ناولوں کی وجہ سے مشہور ہیں۔ آپ کے قلم سے کئی ناول نکل چکے ہیں تاہم آپ کو زیادہ مشہوری رابرٹ لینگڈن سیریز سے حاصل ہوئی جس کے سلسلے کے اب تک تین ناول آ چکے ہیں۔ آپ کے ناولوں کی خاص بات ان کی تیز رفتاری ہے اور موضوع کے متعلق ان کی تحقیق ہے جس کے باعث ناول پڑھتے پڑھتے ہی قاری کئی مختلف موضوعات پہ معلومات حاصل کر لیتا ہے جو نا صرف اس کی معلومات میں اضافے کا باعث بنتی ہیں بلکہ ناول کے پلاٹ کی مضبوطی میں بھی اہم کردار ادا کرتی ہیں۔

ڈیسیپشن پوائنٹ کی کہانی خلائی مخلوق اور ناسا کے گرد گھومتی ہے۔ خلائی مخلوق کی تلاش آج کل کے زمانے کی انتہائی اہم تلاش ہے۔ تاہم یہ تلاش نئے دور کی دین نہیں ہے بلکہ انسان صدیوں سے آسمان پہ ستاروں کو دیکھ کے اس بارے میں غور و فکر کرتا آیا ہے کہ آیا وہ اس کائنات میں تنہا ہے یا ستاروں پہ بھی کوئی مخلوق آباد ہے۔ Continue reading 053- ڈیسیپشن پوائنٹ (Deception point) از ڈین براؤن (Dan Brown)

051- State of fear by Michael Crichton

State of fear by Michael Crichton

مصنف: مائیکل کریکٹن
زبان: انگریزی
سن اشاعت: 2004

مائیکل کریکٹن انگریزی زبان کے جانے مانے مصنف ہیں۔ آپ کے قلم سے زیادہ تر سائنس فکشن اور تھرلر ناولز نکلے ہیں جنہوں نے بہت زیادہ مقبولیت حاصل کی ہے۔ آپ کے کریڈٹ پہ جراسک پارک جیسے ناول اور فلمیں موجود ہیں۔ آپ کی تحریروں کے موضوعات میں ایکشن اور جدید ترین ٹیکنالوجی لازم ہیں۔ عموماً آپ نے ایسے موضوعات پہ قلم اٹھایا ہے جن میں ٹیکنالوجی اور انسانی نا اہلی کے ملاپ سے ہونے والے حادثات پہ روشنی پڑتی ہے۔

زیر گفتگو ناول اسٹیٹ آف فیئر، جس کا اردو ترجمہ “حالتِ خوف” ہو سکتا ہے کا موضوع گلوبل وارمنگ ہے۔ گلوبل وارمنگ آج کی دنیا کے اہم ترین موضوعات اور مسائل میں سے ایک ہے۔ Continue reading 051- State of fear by Michael Crichton

050- روسی جرنیل کی پراسرار موت از مقبول جہانگیر

روسی جرنیل کی پراسرار موت از مقبول جہانگیر

RGKPMمصنف: مقبول جہانگیر
صفحات: 403

مقبول جہانگیر کا نام اب کتابستان کے قارئین کے لئے نیا نہیں ہے۔ ہم پہلے بھی ان کے کام کے بارے میں بات کر چکے ہیں۔ کتابستان میں آج بھی ان کی ایک کتاب زیر گفتگو ہے جس کا عنوان ہے “روسی جرنیل کی پراسرار موت”۔ یہ عنوان کتاب کے موضوع کی بخوبی وضاحت کرتا ہے اور کتاب کھولنے سے پہلے ہی قاری پہ واضح کرتا ہے کہ یہ جرم و جاسوسی کے موضوع پہ لکھی گئی ہے۔ یہ کتاب مقبول جہانگیر صاحب کی وفات کے بعد ان کی ایک عزیزہ نے شائع کروائی ہے جن کے مطابق یہ کتابی شکل میں شائع ہونے سے پہلے قسط وار شائع ہو چکی ہے اور قارئین میں بےحد مقبول ہوئی۔

یہ کتاب ایک اہم روسی جرنیل کی موت کے بعد اس کے قاتل اور قتل کے اسباب کے کھوج کی روداد بیان کرتی ہے۔ Continue reading 050- روسی جرنیل کی پراسرار موت از مقبول جہانگیر

048- ہم سفر از فرحت اشتیاق

ہم سفر از فرحت اشتیاق

مصنفہ: فرحت اشتیاق

جوں جوں میڈیا ترقی کر رہا ہے توں توں ناولوں پہ ڈرامے بننے کا رجحان فروغ پا رہا ہے۔ ہالی وڈ میں بھی مختلف ناولوں پہ فلمیں بنانے کا رجحان ہے اور ناولوں پہ کئی مشہور فلمیں بنائی جا چکی ہیں جیسے ہیری پوٹر سیریز، سائلنس آف دی لیمب، دی ڈا ونشی کوڈ وغیرہ۔ اسی طرح آج کل ایک چینل پہ دکھایا جانے والا مقبول عام ڈرامہ عشق ممنوع بھی ایک ناول کی ہی ڈرامائی تشکیل ہے۔ یہی رجحان پاکستان میں بننے والے ڈراموں میں بھی پایا جاتا ہے۔ آج کل بننے والے ڈراموں کی اکثریت خواتین ڈائجسٹوں میں چھپنے والے ناولوں پہ مبنی ہے۔ اور انہی ناولوں میں سے ایک ناول ہمسفر بھی ہے جس پہ بننے والے ڈرامے کو ملک گیر شہرت حاصل ہوئی ہے۔ اس ناول کی مصنفہ فرحت اشتیاق صاحبہ کے تعارف کے لئے یہ ہی کافی ہے کہ آپ ہم سفر کی مصنفہ ہیں۔ Continue reading 048- ہم سفر از فرحت اشتیاق

046- پیا رنگ کالا از بابا محمد یحییٰ خان

پیا رنگ کالا از بابا محمد یحییٰ خان

Piya Rang Kala By Baba yahya Khanمصنف: بابا محمد یحییٰ خان
صفحات: 722

بابا محمد یحییٰ خان موجودہ دور کے بابا ہیں۔ آپ ممتاز مفتی اور اشفاق احمد کے قبیل سے تعلق رکھتے ہیں اور ان کو اپنا مرشد مانتے ہیں۔ بابا جی کے بارے میں کئی لوگ جانتے ہوں گے۔ زیر گفتگو کتاب “پیا رنگ کالا” بظاہر بابا محمد یحییٰ خان کی آپ بیتی ہے۔ بظاہر کا لفظ یہاں اس لئے استعمال کیا ہے کہ اس کتاب میں بہت ساری ایسی ماورائی اور بعید از عقل باتیں موجود ہیں جن کی حقیقت کی سند دینا بہت مشکل ہے۔ ایسی باتوں کی موجودگی کی بنا پہ عقل پسند لوگ اس کتاب کو ناول کا درجہ دیتے ہیں اور اگر انہی کی بنیاد پہ کئی ماننے والے بابا جی کو “علم” والے بندے کا درجہ دے دیتے ہیں۔ تاہم حقیقت کیا ہے Continue reading 046- پیا رنگ کالا از بابا محمد یحییٰ خان

045- چوتھی سمت از علیم الحق حقی

چوتھی سمت از علیم الحق حقی

مصنف: علیم الحق حقی
صفحات: 174

علیم الحق حقی کا نام پاکستانی قارئین کے لئے نیا نہیں ہے۔ آپ کے قلم سے عشق کا عین، عشق کا شین، تاش کے پتے، اور دجال جیسے کئی ناول نکل چکے ہیں۔ جو بے انتہا مقبول رہے ہیں۔ علیم الحق حقی کے ناولوں کی خصوصیت ان کی سادہ زبان ہے۔ آپ سلیس اردو میں لکھتے ہیں اور کہانی آپ کے قلم سے پھسلتی چلی جاتی ہے۔ آپ کی تحاریر آسان اور عام فہم ہوتی ہیں اور ایک عام قاری کے ذہنی معیار پہ پورا اترتی ہیں جس کی وجہ سے کتاب کا پیغام قاری تک بخوبی پہنچ جاتا ہے۔ یہی آپ کی مقبولیت کی وجہ ہے۔ کتابستان میں آج کا موضوع آپ کی لکھی ہوئی ایک کتاب ہے جس کا عنوان ہے “چوتھی سمت”۔

چوتھی سمت، کا موضوع آواگون ہے یعنی مرنے کے بعد لیا جانے والا دوسرا جنم۔ یہ ایک کامیاب نوجوان مصنف کی کہانی ہے جو فلموں کے لئے لکھتا ہے۔ اور حال ہی میں اس کی ایک فلم کی کہانی آسکر ایوارڈ کے لئے نامزد بھی ہوئی ہے۔ Continue reading 045- چوتھی سمت از علیم الحق حقی