043- پیرِ کامل از عمیرا احمد

پیرِ کامل از عمیرا احمد

مصنفہ:عمیرا احمد

عمیرا احمد کا نام کسی تعارف کا محتاج نہیں۔ ہم پہلے بھی ان کی کتب کا ذکر کر چکے ہیں۔ آج جس کتاب کا تعارف پیش کیا جا رہا ہے وہ عمیرا احمد کے قلم سے نکلی ہوئی تمام کتب میں سے مقبول ترین کتاب کے درجے پہ فائز ہے۔ نہ صرف یہ عمیرا احمد کی کتب میں سے بہترین کتاب ہے بلکہ شاید گزشتہ دہائی کی بھی مقبول ترین کتاب ہے۔ یہ کتاب کئی سالوں سے آن لائن بک اسٹور ای مرکز کی سب سے زیادہ خریدی جانے والی کتاب میں شامل ہے اور ایسا لگتا ہے کہ آئندہ کئی سال تک بھی اس کتاب کے مقابلے میں شاید کوئی کتاب نہ آ سکے۔ تاہم وقت کے ساتھ ساتھ عمیرا احمد کے کام میں نکھار آیا ہے۔ ان کے بعد میں آنے والے ناول جیسے تھوڑا سا آسمان اور من و سلویٰ اپنے مضبوط پلاٹ کی بنیاد پہ پیر کامل سے کافی بہتر لکھے گئے ہیں۔ لیکن یہ پیر کامل کا موضوع ہے جو اسے منفرد اور دیگر ناولوں سے ممتاز کرتا ہے اور کسی حد تک متنازعہ بھی۔

ناول کا عنوان پیر کامل ہے۔ عمیرا احمد نے حضور پاک صلی اللہ علیہ وسلم کو پیر کامل قرار دیا ہے جو بالکل درست ہے۔ کہانی کا موضوع حضور پاک صلی اللہ علیہ وسلم کی محبت ہے۔ پیر کامل سالار کی کہانی ہے۔ سالار، جو ایک انتہائی جینئس شخص ہے اور فوٹوگرافک میموری کا مالک ہے۔ وہ ایک انتہائی امیر گھرانے سے تعلق رکھتا ہے اور ان تمام خصوصیات کا حامل ہے جو امیر گھرانوں کے بگڑے ہوئے بچوں کا خاصہ ہیں۔ پیر کامل امامہ کی کہانی ہے۔ امامہ، جس کی زندگی کا سب سے بڑا خواب ڈاکٹر بننا ہے اور جسے لگتا ہے کہ اگر وہ کسی وجہ سے ڈاکٹر نہیں بن سکی تو وہ افسوس میں مر جائے گی۔ تاہم ایک سوچ وہ ہوتی ہے جو انسان اپنے لئے سوچتا ہے اور ایک تدبیر وہ ہوتی ہے جو اللہ چلتا ہے۔ سالار اور امامہ کو بھی علم نہیں تھا کہ ان کے لئے اللہ تعالیٰ نے کیا منتخب کیا ہے۔ امامہ قادیانی خاندان سے تعلق رکھتی تھی۔ اسے دورانِ تعلیم علم ہوتا ہے کہ قادیانی مذہب کی تعلیمات اسلام کی اصل تعلیمات سے منافی ہیں اور یہ کہ وہ مسلمان نہیں۔ اس بات نے امامہ کی زندگی بدل دی۔ اس نے قادیانی مذہب ترک کرکے اسلام قبول کر لیا۔ اسی دوران اس کی دوستی ایک مسلمان لڑکے سے ہو گئی۔ تاہم امامہ کے گھر والوں نے امامہ کے قبول اسلام اور پسند کی شادی کے لئے رضامندی نہیں دی اور اس کا رشتہ اس کے والد نے اپنے بھائی کے بیٹے سے طے کر دیا اور امامہ کے گھر سے باہر نکلنے پہ پابندی لگا دی۔ امامہ نے اپنے والدین کو سمجھانے کی بہت کوشش کی کہ وہ اس کی شادی کسی غیر مسلم (اس کے کزن) سے نہ کریں لیکن وہ نہیں مانے۔ مشکل کے اس دور میں امامہ کے دوست نے بھی اس کا ساتھ دینے سے منع کر دیا اور بالآخر امامہ، سالار کی مدد سے گھر سے باہر نکلنے میں کامیاب ہوئی۔ اس سے پہلے امامہ نے سالار سے نکاح بھی کر لیا تھا تاکہ اس کے والدین اس کی شادی کسی غیر مسلم سے نہ کرسکیں۔ اور یہیں سے امامہ اور سالار کی زندگی بدل جاتی ہے۔ امامہ جو ڈاکٹر بننے کے خواب دیکھ رہی تھی۔ اب تعلیم حاصل کرنے سے بھی محروم ہوگئی اور ماں باپ کی شفقت سے بھی۔ دوسری طرف سالار پہ بظاہر اس واقعے کا کوئی اثر نہ ہوا، اور وہ اعلیٰ تعلیم کے لئے باہر چلا گیا۔ تاہم اس کی زندگی کے حالات ایسا رخ اختیار کرتے چلے گئے کہ اس کی شخصیت مکمل بدل گئی۔ ایک وقت تھا کہ دنیا کی ہر برائی اس میں موجود تھی اور پھر اس کی کایا ایسی پلٹی کہ وہ حافظ قرآن بن گیا۔ سالار خود بھی نہیں جانتا تھا کہ وہ امامہ کی محبت میں مبتلا ہو گیا تھا۔ لیکن امامہ سے اس کا کوئی رابطہ نہیں تھا۔

سالار اور امامہ کی اس محبت کا کیا انجام ہوا، اس کے لئے تو ناول ہی پڑھنا پڑے گا۔ بلکہ ہمیں یقین ہے کہ یہاں آنے والے قارئین کی اکثریت نے یہ ناول ضرور پڑھا ہو گا۔ اس لئے مزید کچھ کہنے کی ضرورت نہیں۔ سالار، عمیرا احمد کے تخلیق کردہ تمام کرداروں میں سب سے مقبول کردار ہے اور قارئین کی اکثریت کا پسندیدہ ہے۔ ناول میں قادیانی مذہب کے متعلق مصنفہ کے خیالات سے فرقہ احمدیہ سے تعلق رکھنے والے قارئین کی بہت دل شکنی ہوئی جس نے اس ناول کو متنازعہ بھی بنا دیا۔ کہانی میں کچھ پہلو تشنہ بھی رہ گئے جیسے کہانی کے ایک کردار سعد کا الجھا ہوا کردار۔ اس کردار کی کہانی کو مصنفہ نے واضح نہیں کیا۔ مصنفہ کے بقول اس ناول کا دوسرا حصہ “آب حیات” کے عنوان سے جلد ہی سامنے آئے گا جس میں ان تشنہ پہلوؤں کو واضح کیا جائے گا۔ اپنے منفرد موضوع اور بہترین کہانی کی وجہ سے یہ کتاب ہر شخص کو ضرور پڑھنی چاہئے۔

کیا آپ اس تبصرے سے متفق ہیں۔اس کتاب کے بارے میں تبصرہ کریں ۔

اگر آپ نے یہ کتاب پڑھی ہے تو اسے 1 سے 5 ستاروں کے درمیان ریٹ کریں۔

تشریف آوری کے لئے مشکور ہوں۔

اگلے ہفتےممتاز مفتی کی کتاب “لبیک ” کا تعارف و تبصرہ ملاحظہ کیجئے۔ان شاء اللہ۔

***************

عمیرا احمد کے قلم سے مزید

عکس از عمیرا احمد

تھوڑا سا آسمان از عمیرا احمد

Advertisements

4 thoughts on “043- پیرِ کامل از عمیرا احمد”

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s